والدین کا معذور بچے کو اپنانے سے انکار کے بعد سب انسپکٹر نے اپنی اہلیہ کے ہمراہ بچے کو گود لے لیا

(آئی این این نیوز)

الدین کا معذور بچے کو اپنانے سے انکار کے بعد سب انسپکٹر نے اپنی اہلیہ کے ہمراہ بچے کو گود لے لیا۔ تفصیلات کے مطابق یہ واقع ایبٹ آباد کے ایوب میڈیک کمپلیکس میں پیش آیا ہے جہاں والدین ذہنی اور جسمانی طور پر معذور بچے کو چھوڑ کر چلے گئے تھے۔ جب سب انسپکٹر کو اس بات کی خبر پوئی تو انہوں نے اپنی اہلیہ سمیت بچے کو
گود لینے کا فیصلہ کیا۔

سوشل میڈیا پر یہ خبر پھیلتے ہی لوگوں نے سب انسپکٹر کے اس اقدام کی خوف تعریف کی۔ ایک صارف کی جانب سے کہا گیا ہے کہ بےشک ان جیسے لوگوں کی وجہ سے ہی ہمارا معاشرے برقرار ہے۔

ایک صارف نے سب انسپکٹر کے لئے دعا کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ ان پر اپنی رحمت کرے۔

ایک صارف نے پیغام جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس انسپکٹر کا کئے جانے والا کام انسانیت کی خدمت ہے، اس با ہمت انسان کو میری طرف سے سیلیوٹ ہے جس نے یہ بڑا کام کیا ہے۔
ایک صارف نے سب انسپکٹر نے نام پیغام جاری کرتے ہوئے بتایا ہے کہ مجھے یقین نہیں آ رہا ہے کہ کوئی شخص اس طرح بھی کر سکتا ہے، اس صارف نے سب انسپکٹر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا ہے کہ میں آپ کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں کہ آپ نے ہمارا انسانیت پر یقین قائم رکھا۔
خیال رہے کہ پاکستان میں عموماََ اس طرح کے واقعات سامنے آتے رہتے ہیں جہاں اگر اولاد معذور ہو تو والدین کی جانب سے اپنانے سے انکار کر دیا جاتا ہے۔ عام طور پر ایسے بچوں کے مستقبل کو تباہ کر دیا جاتا ہے یا انہیں کسی فلاحی ادارے میں بھیج دیا جاتا ہے۔ لیکن اس سب انسپکٹر نے بچے کو گود لے کر انسانیت کی بہترین مثال قائم کر دی ہے جو شاید کہیں نظرنہیں آتی۔