پنسلوانیا کے معاملے پر ٹرمپ کو اپیل کورٹ میں بھی شکست

(آئی این این نیوز)

امریکی فیڈرل اپیل کورٹ نے بھی ٹرمپ کے ریاست پنسلوانیا میں دھاندلی کے دعوے کو سختی سے مسترد کردیا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق امریکی فیڈرل اپیل کورٹ کے تین رکنی بینچ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ کیس کا کوئی میرٹ نہیں اور ٹرمپ کے وکلا نے کوئی مخصوص الزامات عائد نہیں کیے جب کہ اس حوالے سے کوئی ثبوت بھی نہیں دیے گئے۔

اس سے قبل امریکی لور کورٹ بھی پنسلوانیا میں ٹرمپ کے دھاندلی کے دعوے کو مسترد کرچکی ہے جس کے بعد امریکی صدر کے وکلا نے لور کورٹ کے فیصلے کو وفاقی اپیل کورٹ میں چیلنج کیا اور عدالت سے فیصلے پرنظر ثانی کی استدعا کی گئی تھی۔

اپیل کورٹ کے جج نے اپنے فیصلے میں کہا کہ آزادانہ اور شفاف انتخابات ہماری جمہوریت کی زندگی ہیں، دھاندلی کے الزامات سنجیدہ ہیں مگر الیکشن کو دھاندلی زدہ قرار دینے کا مطالبہ درست نہیں۔

جج کا کہنا تھا کہ الزامات کو ثابت کرنے کے لیے ثبوت کی ضرورت ہے جو عدالت میں موجود نہیں ہیں۔

فیڈرل اپیل کورٹ کے فیصلے پر ٹرمپ کے وکلا نے سپریم کورٹ جانے کا عندیہ دیا۔

واضح رہے کہ امریکی ریاست پنسلوانیا سے ڈیموکریٹک امیدوار جوبائیڈن 80 ہزار ووٹوں کی برتری سے کامیاب ہوئے ہیں جب کہ وہ صدر بننے کے لیے درکار 270 ووٹوں کا ہندسہ عبور کرکے 306 الیکٹورل ووٹ حاصل کرچکے ہیں۔

جمعرات کے روز ایک بیان میں ٹرمپ کا کہنا تھا کہ اگر جوبائیڈن کو فاتح ڈکلیئر کردیا جائے تو پیچھے ہٹ جائیں گے لیکن اگلے ہی روز ٹرمپ نے پھر بے بنیاد الزامات کی بوچھاڑ کردی اور کہا کہ جوبائیڈن صرف اس صورت وائٹ ہاؤس میں داخل ہوسکتے ہیں جب وہ یہ ثابت کردیں کہ انہوں نے 8 کروڑ ووڈ جعل سازی اور غیر قانونی طریقے سے نہیں لیے۔

امریکی فیڈرل کورٹ کے فیصلے کے بعد شکست خوردہ ٹرمپ کو بڑا دھچکا لگا ہے اور پنسلوانیا سے جوبائیڈن کی فتح پر قبضہ کرنے میں ناکام ہوئے ہیں۔